بیلین ٹری سونامی میں بے تحاشا کرپشن ہوا ہے،نیب تحقیقات کرے؛ مولانا عبدالاکبر چترالی

پشاور(نامہ نگار)جماعت اسلامی کے مرکزی راہنما و ممبر قومی اسمبلی مولانا عبدالاکبر چترالی نے کہا کہ بلین ٹری منصوبہ کرپشن کا انوکھا طریقہ واردات ہے جس میں بے تحاشا کرپشن ہوئی ہے۔انہوں نے قومی احتساب بیوروسے مطالبہ کیا کہ اس بڑے اسکینڈل کی تحقیقات کرے کہ کن کن اضلاع میں کتنے کتنے پودے لگائے گئے،کتنے پو دے ناقص تھے جو اللہ کو پیارے ہو گئے. انہوں نے کہا کہ پورے ضلع چترال میں صرف چند مقامات پر نمائشی طور پر پودے لگائے گئے ایک ارب سولہ کروڑ پودے کیا فیس بک پر لگائے گئے ہیں جو زمین پر لوگوں کو نظر ہی نہیں آتے،ضلع چترال میں اتنے پودے نہیں لگائے گئے جتنے جنگلاتی علاقوں میں سنو فال،ونڈ فال اور انڈس پالیسی بنا کر پی ٹی آئی حکومت درخت کاٹ کاٹ کر اپنی پارٹی کے سابق امیدواروں کو نوازا،ارندو کے جنگلات اور بمبوریت سے بے دریغ ہزار وں مکعب فٹ عمارتی لکڑی کٹائی کر کر کے حاصل کی اور اس طرح پی ٹی آئی سے تعلق رکھنے والے ٹمبر مافیا نے چترال کے جنگلا ت کا ستیا ناس کر دیا جبکہ 2018کے سیلاب سے متاثرہ افراد کو صرف 25 مکعب فٹ لکڑی بمشکل ملتی ہے جو ان کی ضروریات کا 5 فی صد بھی نہیں۔مولانا عبدالاکبر چترالی نے کہا کہ ایک ارب سولہ کروڑ پودے لگا نے کا مطلب یہ ہے کہ ضلع چترال میں کم از کم بیس کروڑ پودے لگائے گئے ہیں کیونکہ ضلع چترال خیبر پختونخوا کا پا نچواں حصہ ہے لیکن ضلع میں کروڑوں تو کیا ہزاروں پودے بھی نظر نہیں آرہے۔انہوں نے نیب سے مطالبہ کیا کہ فوری طور پر اس اسکینڈل کی تحقیقات کرے۔</p>

اپنا تبصرہ بھیجیں